دو حمل ضائع اور 3 مرتبہ بے اولادی کے علاج سے گزری ہوں: نادیہ افگن | اردو میڈیا

admin
admin 18 جون, 2022
Updated 2022/06/18 at 9:00 صبح
288943 104151 updates
288943 104151 updates

کچھ روز قبل نادیہ افگن نے ایک پروگرام میں شرکت کی تھی جہاں انہوں نے کہا تھا کہ ان کے پاس دو کتے ہیں، وہ دنیا کے سارے بچوں کو اپنا بچہ سمجھتی ہیں—فوٹو فائلپاکستان کی مایہ ناز اداکارہ نادیہ افگن نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں دیے گئے اپنے بیان کی وضاحت پیش کی ہے۔کچھ روز قبل نادیہ افگن نے ایک پروگرام میں شرکت کی تھی جہاں انہوں نے کہا تھا کہ ان کے پاس دو کتے ہیں، وہ دنیا کے سارے بچوں کو اپنا بچہ سمجھتی ہیں چونکہ ان کے بچے نہیں ہیں۔اداکارہ نے یہ بھی کہا تھا کہ آج کل کے دور میں بچوں کی پرورش کرنا بے حد مشکل ہے۔تاہم نادیہ کے انٹرویو کے ویڈیو کلپس سوشل میڈیا پر وائرل ہوئے تو لوگوں نے اسے غلط انداز سے لیا اور اداکارہ کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا جس کے بعد انہوں نے 16 جون کو انسٹاگرام پر وضاحتی پوسٹ شیئر کی۔نادیہ افگن کی وضاحت:اداکارہ نے اپنی پوسٹ میں لکھا کہ ‘میں نے فیصلہ کیا تھا کہ میں اس بارے میں کبھی عوامی سطح پر بات نہیں کروں گی کیونکہ یہ انتہائی تکلیف دہ بات ہے لیکن اب مجھے وضاحت دینے کی واقعی ضرروت ہے’۔نادیہ نے کہا کہ ‘وضاحت کی ضرورت اس لیے ہے کہ ہمارے سوشل میڈیا انفلوئنسرز غیر ضروری مصالحہ پسند کرتے ہیں لیکن مجھے یہ دیکھ کر دھچکا لگا کہ میرے ذاتی بیان پر خواتین نے بھی سخت ردعمل دیا۔’انہوں نے کہا کہ ‘مجھے اس بات پر مکمل یقین تھاکہ خواتین، چاہے ان کے بچے ہوں یا نہ ہوں، جانتی اور سمجھتی ہوں گی کہ یہ معاملہ کتنا پیچیدہ اور سنجیدہ ہے، میں سوچتی تھی کہ خواتین سمجھتی ہوں گی کہ یہ سفر کس حد تک مشکل ہوسکتا ہے لیکن گزشتہ کچھ دنوں نے مجھے بتایا کہ میں کتنی غلط تھی‘۔نادیہ نے انکشاف کیا کہ ’15 سال کی شادی میں میرے دو دفعہ استقاطِ حمل ہوئے، تین بار میں بے اولادی کے سخت اور مشکل علاج سے گزری، پرورش سے قبل دو بچوں کو کھونا میرے لیے سخت تکلیف دہ تھا جس کے بعد میں ڈپریشن سے بھی گزری، ہارمونز کے مسائل کی وجہ سے میرا وزن بھی بڑھ گیا’۔اداکارہ نے کہا کہ ‘اس سارے سفر میں میرے شوہر نے مجھے بے پناہ سپورٹ کیا، انہوں نے ذہنی طور پر میرا ساتھ دیا اور میری حالت کو سمجھا’۔نادیہ افگن کی وضاحتی پوسٹ پر شوبز سے منسلک شخصیات نے ان سے اظہارِ ہمدردی کیا اور ان کے لیے نیک خواہشات کا بھی اظہار کیا۔

اس آرٹیکل کو شیئر کریں۔
ایک تبصرہ چھوڑیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے