ڈالر 190 روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا، اسٹاک مارکیٹ میں 500 پوائنٹس کی کمی

imran
imran 11 مئی, 2022
Updated 2022/05/11 at 8:02 صبح
627b6372d2a1f
627b6372d2a1f

امریکی ڈالر کی اونچی اڑان رک نہ سکی، روپے کے مقابلے میں ڈالر 190 روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا جبکہ پاکستان اسٹاک ایکسچنج میں بھی مندی کا رجحان دیکھا جارہا ہے۔

کاروباری ہفتے کے تیسرے روز روپے کے مقابلے میں ڈالر کی قدر میں ایک روپیہ اضافہ دیکھا گیا، جس کے بعد ڈالر نے تاریخ کی بلند ترین سطح حاصل کرلی ہے، قبل ازیں یکم اپریل کو سیاسی انتشار کے سبب ڈالر 188 روپے 25 پیسے پر پہنچا تھا۔

کراچی انٹر بینک مارکیٹ میں ڈالر 190 روپے 10 پیسے کی ریکارڈ سطح پر آگیا ہے۔

ڈائریکٹر عارف حبیب گروپ احسن محنتی نے میٹیس گلوبل کو بتایا ہے کہ تیل کے زیادہ درآمدی بل اور سعودی پیکج سے متعلق قیاس آرائیوں کی وجہ سے روپیہ دباؤ کا شکار ہے۔

دوسری جانب چئیرمین فاریکس ایسوسی ایشن ملک بوستان نے ڈان نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ سیاسی محاذ آرائی ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں کمی کی وجہ بن رہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سیاسی جماعتوں کی لڑائی تک ڈالر کی اڑان جاری رہے گی۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز ملک بوستان نے حکومت کو مشورہ دیا تھا کہ وہ روپے پر دباؤ کم کرنے کے لیے سعودی عرب سے پاکستان کو ملنے والے پیکج کی تفصیلات ظاہر کرے۔

رواں ماہ وزیر اعظم شہباز شریف کے دورۂ سعودی عرب کے دوران سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے موجودہ معاشی بحران سے نمٹنے کے لیے پاکستان کی نئی حکومت کی مدد کے لیے 3 ارب ڈالر کے قرض کی مدت میں توسیع پر بات کرنے پر اتفاق کیا تھا۔

تاہم ابھی تک ان مذاکرات سے متعلق کوئی ٹھوس تفصیلات سامنے نہیں آئی ہیں۔

خیال رہے کہ یکم اپریل کو سیاسی انتشار عروج پر ہونے کے سبب ڈالر تاریخ کی بلند ترین سطح 189 روپے 25 پیسے پر جاپہنچا تھا، حکومت کے تبدیل ہونے کے بعد ڈالر کی قدر میں فوری طور پر کمی دیکھی گئی تھی، تاہم یہ بہتری زیادہ دیر برقرار نہیں رہی اور ڈالر نے ایک بار پھر اڑان بھرنا شروع کردی ہے۔

دریں اثنا 9 مئی کی دوپہر تک روپے کی قدر میں ایک روپے 25 پیسے کمی دیکھی گئی تھی جس کے بعد انٹر بینک میں ڈالر 188 روپے 5 پیسے پر پہنچ گیا جبکہ اوپن مارکیٹ میں امریکی کرنسی کی قیمت 187 روپے 8 پیسے ہوگئی تھی۔

اسٹاک مارکیٹ میں مندی

کاروباری ہفتے کے تیسرے روز پاکستان اسٹاک ایکسچنج میں بھی مندی کے بادل چھائے ہوئے ہیں، 100 انڈیکس 500 سے زائد پوانٹس کی کمی سے 42 ہزار 900 پوانٹس پر آگیا۔

ایکسچنج کمپنیز ایسوسی ایشن آف پاکستان کے سربراہ ظفر پراچہ کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف سے بات چیت میں تاخیر سے زرمبادلہ کے ذخائر پر دباؤ پڑرہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ رواں سال 10 ارب ڈالر کی ادائیگیاں کرنی ہیں اگر پروگرام میں توسیع نہ ہوئی تو روپے پر بہت زیادہ دباؤ آسکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ معاشی منیجرز حالات کو کنٹرول میں کرنے کے لیے فوری اقدامات کریں۔

قبل ازیں کاروباری ہفتے کے پہلے روز 9 مئی کو پاکستان اسٹاک ایکسچنج (پی ایس ایکس) میں شدید مندی کا رجحان رہا تھا جبکہ کے ایس ای 100 انڈیکس میں ایک ہزار 500 سے زائد پوائنٹس کی کمی دیکھی گئی۔

اس دوران پی ایس ایکس کی ویب سائٹ کے مطابق کاروبار کے آغاز میں کے ایس ای 100 انڈیکس 44 ہزار 841 پوائنٹس پر تھا جو دوپہر پونے دو بجے تک 43 ہزار 289 پوائنٹس پر آگیا تھا۔

انٹر مارکیٹ سیکیورٹیز کے سربراہ برائے ایکویٹیز رضا جعفری نے غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے پروگرام میں تاخیر کو مندی کی وجہ ٹھہرایا تھا۔

اس آرٹیکل کو شیئر کریں۔
ایک تبصرہ چھوڑیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

ہمارا فیس بک پیج لائک کریں۔

ہمارے فیس بک پیج کو لائک کرکے تازہ ترین اپڈیٹس حاصل کریں۔


This will close in 30 seconds

AllEscort